جھوٹا امام مہدی

آج فیس بک پر آوارہ گردی کرتے ہوئے اچانک ایک اشتہار پر نظر پڑی۔ اس اشتہار کو بغور پڑھتے ہی معاملے کی حساسیت کا اندازہ ہو جاتا ہے۔ ریاض احمد گوہر شاہی کے بارے میں پہلے کافی سن رکھا تھا مگر اس کے بارے میں مزید آگاہی اس کی ویب سائٹ پر جانے کے بعد ہوئی۔

gohar shahi ad

امت مسلمہ کو ہر زمانے میں ہی بے شمار فتنوں کا سامنا کرنا پڑا ہےجن میں کئی نبوت اور امام مہدی ہونے کے دعوے دار اٹھے اور اپنی دنیا و آخرت برباد کرنے کے ساتھ ساتھ بے شمار لوگوں کو بھی گمراہ کر کے چلے گئے۔

ان میں سے ایک ریاض احمد گوہر شاہی بھی ہے جس نے امام مہدی ہونے کا دعوہ کیا ہے۔ موصوف کی تصویر چاند ستاروں سورج حجرِ اسود اور نہ جانے کہاں کہاں ظاہر ہو چکی ہے اور اسکی وجہ سے موصوف کے پیروکار حضرت امام جعفر صادق کا یہ قول اس پر فٹ کر رہے ہیں کہ "امام مہدی کا چہرہ چاند میں چمکے گا”۔

اس آدمی کے پیروکاروں کا عقیدہ ہے کہ قیامت کے قریب حضرت عیسیٰ ؑ کے ہمراہ گوہر شاہی ہی بطور امام مہدی ہو گا۔ اور ایک لطیفہ ملاحظہ فرمائیے کہ ۱۹۹۷ میں حضرت عیسیٰؑ اس دنیا میں دوبارہ تشریف لائے۔ امریکہ کی ریاست نیو میکسیکو کے شہر طاؤس میں حضرت عیسیٰؑ نے گوہر شاہی سے ملاقات کی۔ (اس ملاقات میں کن امور پر تبادلہ خیال ہوا یہ بات ابھی صیغہ راز میں ہے)

ایک اور اہم بات جو کہ بڑے واضح انداز میں ان کی ویب سائٹ پر لکھی گئی ہے، حجرِ اسود پر رنگ پھیر دیا گیا ہے جس کی وجہ سے حج اور عمرہ موقوف ہو چکا ہے۔ میں نے اپنی پوری زندگی میں اس سے زیادہ بودی دلیل نہیں سنی۔

مزید تفصیل اس کی سائٹ پر جا کر دیکھیے۔  یہاں اس کی تصاویر بھی دی گئی ہیں وہ دیکھ کر بتائیے کہ یہ شخص کہیں سے بھی امام مہدی لگتا ہے؟

یہ ہم مسلمانوں کی بے حسی ہے کہ ایک بار پھر نبوت اور امامت کے جھوٹے دعویداروں کے پیروکار ہر جگہ ( انٹرنیٹ پربھی ) متحرک ہو گئے ہیں اور لوگوں کو کھلے عام گمراہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

اسی بارے میں ایک فتویٰ: عقائد گوہر شاہی اور اس کے معتقدین کے ساتھ نکاح کا حکم

Advertisements

Posted on ستمبر 30, 2009, in مذہب and tagged , , , , . Bookmark the permalink. 32 تبصرے.

  1. او جی پاءجی ان کے ایک پیروکار نے جب وکی پیڈیا پر لکھنا شروع کیا تھا تو جی وھ هم هی تھے جنہوں نے ان کو نتھ ڈالی تھی
    هاں
    لیکن هم ان کی اپنی سائیٹ پر جا کرتو کچھ نههں کرسکتے ناں جی
    وھ اپنے مولوی طاہر صاحب بھی تو ان ریاض صاحب سے کچھ هی کم هیں
    اپ ان کا کیا بگاڑ لیں گے جی ؟؟

    • بہت خوب خاور صاحب۔
      ان کی سائٹوں کا توڑ اسی طرح کیا جاسکتا ہے کہ ہم اپنے بلاگوں پر کبھی کبھی ایسے موضوعات پر بھی اظہار خیال کر لیا کریں۔ ایسی سائٹوں پر جانے والوں سے زیادہ تو اردو بلاگوں پر لوگ آتے ہیں۔

  2. "یہ ہم مسلمانوں کی بے حسی ہے کہ ایک بار پھر نبوت اور امامت کے جھوٹے دعویداروں کے پیروکار ہر جگہ ( انٹرنیٹ پربھی ) متحرک ہو گئے ہیں ”

    App kiya tajweez kartay hain keah kiya jai?

    • ہم یہ کر سکتے ہیں کہ لوگوں کو زیادہ سے زیادہ اس بارے میں آگاہ کریں۔ اپنی محفلوں میں جہاں دنیا جہان کی گپیں لگائی جاتی ہیں وہاں ایسے موضوعات پر بھی بات کر لینی چاہیے۔ اور انٹرنیٹ پر بھی ان کا دندان شکن جواب دیا جا سکتا ہے۔

  3. اس کو جھوٹے کے اوپر لعنت ہو

  4. کنفیوز کامی

    یہ سب دیکھ کر کلمہ پڑھا کریں اور دل میں برا کہ لیں اس سے زیادہ اور کچھ نہیں کر سکتے

  5. ارے بھائی ایسے فتنوں اور شتونگڑوں کا آتے رہنا بھی اس امت کو جگائے رکھنے کا سبب ہے۔ ویسے بھی جب بندہ بے فیض اپنے آپ کو توپ بنانے لگےتو ایسے کرشمےہی دکھاتا ہے۔

  6. فکر نہ کریں ان کی دال نہیں گلنے والی

  7. حدیث ہے کہ ایسے تیس فتنے آنے ہیں مسلمانوں میں۔

  8. مجھے تو یہ حضرت مہدویت سے زیادہ خدائیت کے امیدوار لگ رہے ہیں ان کا کلمہ دیکھیں جس کا مطلب ہے نہیں ہے کوئی معبود سوائے ریاض کے،نعوذ باللہ،لعنت اللہ علی الکاذبین،
    ویسے اس شخص کا تعلق کس علاقے سے ہے؟
    بلو کے نوکمنٹس کچھ اور ہی داستان سناتے نظر آرہے ہیں،اللہ خیر کرے!

  9. سوال یہ ہے کہ مرزا طاہر احمد قادیانی ہو یوسف کزاب ہو یا ریاض احمد گوہر شاہی ہو یہ سب پنجاب میں ہی کیوں پیدا ہوتے ہیں اور پنجاب میں ایسا کیا ہے کہ وہاں کی سرذمین ان فتنوں کے لیئے اتنی زر خیز ثابت ہوتی ہے،
    دوسرا اہم سوال یہ ہے کہ پاکستان میں توہین رسالت اور توہین مذہب کے تو قانون بنے ہوئے ہیں مگر ایسے جھوٹے خدائی کے دعوے کرنے والے آزاد گھوم رہے ہیں ان پر حکومت کی کوئی گرفت نہیں ہے آخر کیوں؟

    • یہ تاثر غلط ہے جناب کہ سب فتنوں کی جڑ پنجاب کی سرزمین ہے۔ فتنے تو عرب، ہندوستان، ایران اور بہت سے دوسرے ممالک سے بھی شروع ہوئے۔
      پاکستان میں قانون ہے کہاں؟ صرف غریبوں کیلیے ہی قانون ہے اور بڑی مچھلیوں پر کوئی ہاتھ نہیں ڈالتا۔
      فی الحال یہ شخص فرشتوں کی میزبانی سے لطف اندوز ہو رہا ہے۔

    • عبداللہ میرے بھاءی تم بھی تو فتنہ ہی ڈال رہے ہو کونسی تبلیغ کر رہے ہو

  10. کامی بھائی میں فتنوں کی جڑ کا پتہ لگانے کی کوشش کررہا ہوں اگر آپ میری بات کو یہ سوچ کر پڑھیں کہ یہ بات ایک پنجابی کہ رہا ہے تو یقینا آپ اس بارے میں سنجیدگی سے سوچیں گے،
    ویسے سعد کی یہ بات بلکل درست ہے کہ ایسے فتنے صرف پنجاب میں نہیں دوسرے اسلامی علاقوں میں بھی پیدا ہوئے،مگر پاکستان میں ان کا تناسب جتنا پنجاب میں ہے کہیں اور نہیں اور میں واقعتا اس کی وجہ جاننا چاہتا ہوں،
    ویسے مینے ایک پنجابی دوست سے یہی سوال کیا تو اس نے مجھے علامہ کے اشعار پنجابی مسلمان کے نام سے سنادیئے،
    مگر مجھے لگتا ہے کہ اس کے علاوہ بھی کچھ وجوہات ہیں جن میں لاعلمی اور تساہل پسندی نمایاں محسوس ہوتی ہیں

  11. میں گوہر شاہی کے فتنے کو دس سال سے زیادہ ہوئے، دیکھ رہا ہوں۔ ویب سائٹ پر ان کا کافی مواد پڑھا۔ صرف امام مہدی ہونے کا نہیں، بل کہ ان کا دعویٰ یہ بھی ہے کہ خداؤں کی آبادی ڈھائی کروڑ کے قریب ہے اور ان تمام خداؤں کا خدا ریاض احمد گوہر شاہی ہے۔ (نعوذ باللہ)۔ بکواسیات کی انتہا ہی ہے۔

  12. السلام علیکم۔
    ایسے لوگ ہمیشہ دوسروں کی کم علمی کا فائدہ اٹھاتے ہیں ورنہ انہیں غلط ثابت کرنا کوئی مشکل کام نہیں ہوتا۔
    میری تجویز ہے کہ ہر اردو بلاگر کم از کم مہینے میں ایک بار قرآن مجید کی کوئی آیت یا کوئی حدیثِ نبوی ترجمہ اور تشریح کے ساتھ بلاگ پر ضرور لکھا کرے۔ آیت یا حدیث ایسی منتخب کی جائے جو عام لوگوں کی سمجھ میں آسانی سے آ سکے اور اسے سمجھنے میں غلطی کا امکان نہ ہو۔ آہستہ آہستہ تعداد بڑھے گی تو ایک اچھا خاصا ذخیرہ جمع ہو جائے گا جو کہ ہم آج کے مسلمانوں کو واپس مسلمان بنانے میں انتہائی مدد گار ہوگا۔
    قرآن مجید کی آیات خود ہاتھ سے نقل کرنا اگر مشکل لگے تو "ذکر” نامی اس سافٹ وئیر سے مدد لی جا سکتی ہے۔
    http://zekr.org
    امید ہے کہ تمام اردو بلاگر میری اس تجویز پر غور کریں گے۔ اگر آپ اس تجویز کو ایک الگ تحریر کے طور پر لگا دیتے ہیں تو اس پیغام کے زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچنے کا امکان بڑھ جائے گا کیونکہ تبصرے ہر کوئی تو نہیں پڑھتا۔

  13. کیا امام مھدی نھن آنا تمھارے پاسس کیاسبوتھےک گوھر شاھی امام مھدی نھن ھین ھمت ھے توآوسبوت دو حق گوھرشاھی

    • جناب محمد سلیم صاحب ۔ امام مہدی ہونے کا دعویٰ ہم لوگوں نے نہیں کیا ۔ گوہر شاہی صاحب نے کیا ہے ۔ اور حضور اکرم صلیٰ اللہ علیہ وسلم کی حدیث ہے کہ البینۃ علیٰ المدعی کہ دلیل مدعی کے ذمہ ہے ۔ تو آپ دلیل پیش کریں کہ گوہر شاہی امام مہدی ہے ۔۔ پھر ہم سے جواب مانگیں ۔۔۔ آپ سے ایک سوال ہے کہ امام مہدی نے لوگوں کو حج کے موقعہ پر ملنا تھا اور مسلمانوں نے انکی بیت کرنی تھی ۔۔۔ آپ ہمیں بتاءیں کہ گوہر شاہی صاحب جو پہلے بندر نجاتے تھے وہ حج کو گےء اور تمام مسلمانوں نے ان کی بیت کی ۔۔۔ اور دجال نے بھی امام مہدی کے زمانے میں آنا ہے اور آپ کے مطابق تو امام مہدی مر بھی گےء اور دجال ابھی تک آیا بھی نہیں ؟؟؟


  14. بہت دکھ ہوا یہ دیکھ کر آپ لوگ بغیر کسی تحقیق کے کسی کے بھی بارے میں غلط عقیدہ قائم کرلیتے ہیں۔
    مسلمان پر تحقیق لازم ہے تاکہ کہیں کوئی فعش غلطی نا ہوجائے۔
    ریاض احمد گوہر شاہی کے بارے میں جو معلومات آپ لوگوں تک پہنچ رہیں ہیں انکا سب کا تعلق گوہر شاہی سے نہیں ہے
    آپ لوگ جن ویب سائٹس کا حوالہ دے رہے ہیں وہ ویب سائٹس گوہر شاہی کی نہیں بلکہ مہدی فاؤنڈیشن کی ہیں۔
    ریاض احمد گوہر شاہی کے بارے میں مکمل معلومات کیلئے
    http://www.goharshahi.pk
    کا مطالعہ کریں تاکہ آپ تک گوہر شاہی کا حقیقی مشن اور تعلیمات پہنش سکیں۔
    وسلام


  15. ریاض احمد گوہر شاہی نے کبھی بھی نبوت یا مہدیت کا دعویٰ نہیں کیا
    البتہ آپنے امام مہدی کی نشانیاں بتائیں ہیں جو کہ آج سب ہی بتا رہے ہیں اور مختلف ویب سائٹس پر بھی دیکھی جاسکتی ہیں۔
    گوہر شاہی کے نزدیک نبوت کا دعویٰ کرنے والا کافر اور نماز کا منکر زندیق ہے
    کچھ انتہاہ پسند فرقہ وارانہ اسلام کے ٹھیکیدار جو خود کش حملہ آوروں کو شہید کا درجہ دیتے ہیں
    اور کچھ ایسے جو صحابہ کرام کی غستاخیوں میں مصروفِ عمل ہیں
    لہذا تحقیق کریں
    http://www.goharshahi.pk
    پر تمام تر معلومات میسر ہیں
    براہِ کرم ایک دفعہ اسکا مطالعہ کریں اور پھر فیصلہ کریں
    وسلام


  16. ریاض گوہر شاہی کے دل میں یہ بڑی خواہش تھی کہ وہ مہدیت کا دعویٰ کر دے لیکن مولویوں کا ڈر کے وہ کہیں عدالت میں نہ لے جائیں چناچہ گوہر شاہی نے اپنی کتاب حق کی آواز کے صفحہ تیتیس سے چونتیس پر لکھا ہے
    ” آپ نے فرمایا اگر کسی میں امام مہدی کی نو نشانیاں پائی جاتی ہین اور ایک نہیں پائی جاتی تو آپ ان نشانیوں کو رد نہین کر سکتے ۔۔۔۔ اسی طرح امام مہدی اعلان کرے یا نہ کرے، رہے گا تو امام مہدی ، کیونکہ پاکستان کے انیس سو چوراسی کے قانون میں لکھا ہے کہ : جو شخص امام مہدی ہونے کا دعویٰ کرے اس کو سزاے موت یا عمر قید کی سزا دی جائے گی ۔ اسی لیے امام مہدی مصلحتا خاموش ہیں کہ خواہ مخواہ پابند سلاسل ہونے سے فائدہ ؟
    اسی طرح اپنی ایک تقریر میں اسی بات کو اس طرح گوہر شاہی نے کہا ہے کہ
    اگر آج حکومت اس قانون کو ختم کرے تو کل ہی پورے ثبوت اور حدیثوں کی روشنی میں امام مہدی کو دنیا میں روشناس کر سکتا ہوں ، ورنہ ایک دن دنیا خود ہی پہچان لے گی ۔
    اسی تقریر میں آگے چل کر کہتا ہے کہ
    جس طرح اس وقت حضور پاک صلیٰ اللہ علیہ وسلم گھڑے میں اذان دیتے رہے ، جب تک حضرت عمر نہیں ملے، مصلتحتاً اپنے بستر پر حضرت علی کو سلا کر مدینہ کی طرف ہجرت بھی کی ، اسی طرح امام مہدی بھی مصلحتاً خاموش ہے ۔ اور کسی عمر کے انتطار میں ہے۔ وہ اعلان کرے یا نہ کرے ، جیل مین رہے ، شہر میں رہے یا گوشہ نشیں، وہی امام مہدی ہے ، جو رب کی طرف سے ہے۔ پھر اسے خواہ مخواہ جیل کی سختی برداشت کرنے کی کیا ضرورت ہے ۔
    تقریر بیسیوں گیارہویں شریف، کوٹری تیرہ اگست انیس سو ننانوے
    روزنامہ جنگ لندن اٹھائیس اگست انیس سو ننانوے
    گوہر شاہی کو نبوت کو بھی شوق ہوا چناچہ اس نے حق کی آواز کے صفحہ چار اور پانچ پر لکھا ہے
    "جشن ولادت کے موقع پر ایک رنگین اسٹیکر آر اے جی ایس انٹر نیشنل انگلینڈ نے جاری کیا ، جس میں کملہ اور میرا نام لکھا تھا حالانکہ اس مین کوی ایسی بات نہ تھی ، پھر بھی مخالفوں کے شر کی وجہ سے فوری ضبط کر لیا ۔ اس فورم میں غیر مسلمون کی بڑی تعداد شامل ہے ، ان کی جانب سے اسٹیکر "جشن ولادت” کے موقع پر نکالا گیا، جس کا ہمیں پیشگی قطعی علم نہ تھا ۔ چونکہ اس فورم مٰن غیر مقلسم خصوصاً ہندو، سکھ ، عیسائی مذاہب کی تعداد ہماری جنون کی حد تک معتقد ہے۔ وہ غیر مسلم ہونے کے ناتے لا الہ الا اللہ کے قائل ہیں، لیکن محمد رسول اللہ نہیں پڑھتے ۔ ہن نے حکمت کے تحت لا الہ الا اللہ کا قائل کر کے انہیں اسم ذات کے ذکر کی طرف راغب کیا تاکہ ان کے دلوں مین نور اترے۔ اور ان میں اللہ کی محبت پیدا ہو ۔۔۔۔۔ جشن ولادت کے موقع پر پاکستان کے علاوہ انگلینڈ و دیگر ممالک سے بھی مسلم اور غیر مسلم اس تقریب میں شریک ہوے۔ ان غیر مسلمون نے اس اسٹیکر کے ذریعے اپنے عقیدے کو ظاہر کیا، لیکن ہم نے مخالفین کے شر کی وجہ سے فوراً ضبط کر لیا۔”
    جب کہ حقیقت یہ ہے کہ اس میں کلمہ کے بعد محمد الرسول اللہ کی بجاے گوہر شاہی کا نام لکھا ہوا تھا اس سٹیکر کی تصویر دیکھنے کے لیے اس لنک پر جائیں ۔

    اسی طرح ایک اور جگہ گوہر شاہی لکھتا ہے کہ
    امام مہدی اور حضرت عیسیٰ ظاہر ہو چکے ہیں۔ ان کے قریبی لوگ ہیں وہ انہیں جانتے جا رہے ہیں ۔ اور جو بھی ان کے قریب ہوتا جاتا ہے وہ انہیں جانتا جاتا ہے ۔ اور اس طرح ان کی تعداد بڑھتی جا رہی ہے ۔
    حق کی آواز صفحہ سترہ ، ملفوظات گوہر شاہی۔ یکم تا پندرہ جون انیس سو اٹھانوے

  17. محمد سعید پالن پوری


    یہ لوجی اپ کے توسط سے پہلی بار” امام مہدی” عل کی زیارت کا شرف حاصل ہوا۔ بعد زیارت وہ حال طاری ہوا کہ ڈاکٹر کے یہاں جانا پڑا۔ اللہ ان مولویوں کو جزائے خیر دے کہ ان جھوٹوں کا ان کے سامنے بس نہیں چلتا ورنہ یہ تو کب کا ہمارے ایمان پہ ڈاکا ڈال چکے ہوتے


  18. اللہ خیر کرے۔۔۔ ابھی پتا نہیں اور کتنے امام مہدی اور دیکھنے پڑیں گے۔۔۔
    جب اصل امام مہدی ظہور پزیر ہوں گے تو میڈیا پر پراپگینڈہ کرنے کی ضرورت ہی نہیں رہے گی۔۔۔ اللہ خود ہی امت کو دکھا دیں گے۔۔۔ اور خود ہی دلوں میں یقین ڈال دیں گے۔۔۔ امام مہدی تو ہر بندے کے پاس جا کر نہیں کہیں گے کہ میرا یقین کرو۔۔۔ میں ہی مہدی ہوں۔۔۔
    اللہ ہدایت عطا فرمائے۔۔۔ آمین۔۔


  19. یار ایک تق آج کل کہ مسلمان ،،،،،،، علم تو ہوتا نہیں ہے بس جو بھی مولوی نے بول دیا اسکو ہی ماننا ہے ارے بھائی پہلے تحقیق کرو پھر الزام لگاو تم نے عقل لوگوں کیا پتہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تبصرہ کیجیے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: